Contact Us

بجلی کی قیمت میں کمی کا فیصلہ آئی ایم ایف کی منظوری سے مشروط

Caretaker PM Anwarulhaq Kakar

اسلام آباد: وفاقی کابینہ نے جولائی اوراگست کے بلز قسطوں میں اداکرنے کی اصولی منظوری دے دی۔فی یونٹ میں کمی کا فیصلہ آئی ایم ایف کے ساتھ مشاورت کے بعد کیا جائے گا ۔

بجلی کی قیمتوں میں اضافے کا بحران شدت اختیار کر گیا یے۔ وزیراعظم انوار الحق کی صدارت میں دو اجلاس ہوئے۔ جن میں کوئی فیصلہ نہ ہوسکا تاہم اج معاملہ وفاقی کابینہ میں پہنچ گیا۔

وفاقی کابینہ نے جولائی آگست میں بلوں کی وصولی آئندہ ماہ قسطوں میں کرنے کی اصولی منظوری دے دی جبکہ حتمی فیصلہ آئی ایم ایف سے منظوری کے بعد نافذ العمل ہوگا۔

رائع کے مطابق ڈسکوز اورواپڈا ملازمین کے مفت یونٹس کامعاملہ توانائی کمیٹی کوبھیج دیاگیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کی رضا مندی کے بعد صارفین کے لیے ریلیف کا اعلان کیا جائے گا۔ اعلان اج متوقع ہے۔

اجلاس میں پاور ڈویژن کی جانب سے عوامی کو ریلیف دینے سے متعلق کئی تجاویز پیش کی گئیں جن پر بحث کے بعد کابینہ نے جولائی اور اگست کے بلز قسطوں میں لیے جانے کی منظوری دے دی۔

دریں اثنا ڈسکوز اور واپڈا کے ملازمین کو مفت بجلی ملنے کا معاملہ بھی کابینہ اجلاس میں زیر بحث لایا گیا۔ وزیراعظم کی ہدایت پر ڈسکوز اور واپڈا ملازمین کے مفت یونٹس کا معاملہ توانائی کمیٹی کو ارسال کردیا گیا اس پر مزید بات کی جائے گی۔

قبل ازیں پاور ڈویژن کی جانب سے بجلی کے بل کی ادائیگی اقساط میں کرنے کی تجویز دی گئی تھی، بھاری بلز کی ادائیگی سردیوں کے مہینوں میں ادا کرنے کی بھی تجویز دی گئی، گھریلو صارفین کو بجلی بلز پر ون سلیب بینیفٹ دینے کی تجویز بھی دی گئی، بجلی بلز پر سیلز ٹیکس اور انکم ٹیکس ختم کرنے پر وزارت خزانہ کی رائے لینے کی تجویز دی گئی۔

ذرائع کے مطابق بجلی بلز پر 9 روپے فی یونٹ جی ایس ٹی عائد ہے، بجلی بلز میں کمی کیلئے بازار اور دفاتر شام چھ بجے تک بند کرنے کی تجویز دی گئی۔

مزید پڑھیں